س : کياباریک اور شفاف کپڑے سے ستر پوشی ہوجاتی ہے ؟ اور کيا مسلمان کيلئے ايسا کپڑا پہن کر نماز اداکرنا درست ہے ؟

س : کياباریک اور شفاف کپڑے سے ستر پوشی ہوجاتی ہے ؟ اور کيا مسلمان کيلئے ايسا کپڑا پہن کر نماز اداکرنا درست ہے ؟
جواب السؤال
بسم اللہ الرحمن الرحیم

جواب : جب مذکورہ کپڑااپنے شفاف ياپتلا ہونے کی وجہ سے جلد کو چھپانہ سکتاہو تو کسی مرد کے لے اس ميں نماز اداکرنا درست نہيں ،الا یہ کہ ایسے کپڑے کے نیچے پاجامہ یا ازار ہو جا ناف اور گھٹنوں کے درمیانی حصہ کو چھپاسکے؛؛؛ اور عورت کےلے بھی ایسے کپڑے میں نماز جائز نہیں ، الا یہ کہ اس کے نیچے کوئی کپڑا یا دیگر کپڑے ہوں جو اسکے تمام بدن کو چھپا سکیں ۔ ایسے کپڑے کے نیچے چھوٹا سا پاجامہ کفایت نہیں کرتا ۔ اس لئے مرد کو چا ہیے کہ جب وہ ایسے کپڑے میں نماز پڑھے تو اسکے نیچے بنیاین یا کوئی ایسی چیز ہو جو اسکے دونوں یا کسی ایک کندھے کو ڈھانک سکے کیونکہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : {لایصلی احدکم فی الثوب الواحد لیس علی عاتقہ منہ شیء }

تم میں سے کوئی شخص ایک کپڑے میں اس حالت میں نماز ادانہ کرے کہ اسکے کندھے پر کچہ نہ ہو ۔ اسکی صحت پر شیخین کا اتفاق ہے۔

{ فتاوی شیخ ابن باز رحمہ اللہ ، ص :57-58 ، مطبوعہ : دارالسلام }